ضف

۳۵۵۵

لم

بس

ی یہ

ضس 0

رو یو یرای

تین ےئ كى ہے اظيا

رت 0 77 و ك0

لا مک شک یری ر بر: ۳ ثم و حه ہف

یف سامت کیبل اام مھ زاپ اککو شی

ولارت: رک ۱۸یس دی وفات: ۱۳۵۱ ری ۱۹۵۲ سوق

تم وی ٹر او ار نخان تا کی ستوی (ڈائریکٹ يذو عرب للق لول »ایر الاک گر پچرریو)

Published by

Islamic Research and Education Trust

Shehre Tayyib, Behind Eidgah, Deoband, India, Pir 247554, Website: www. deobandcenter.com, Eınail’ deobandcenter@gmailcom, Celt +91 888 1115518 TT ا‎

In association with

Maktaba Sautul Qur’ an

Madani Market, Near Darul Uioom, Deoband, 247554, Email: faizulhasanazmi@gmail.com

فت و میٹ ل علا احا فک مقا م

اب بقل عتوق فو یں

نام کاپ : نز و ریگ يبل علاء احا فک مقام

جالف: 13 سيلا م » سن یل اام جر زاہرالگو ڑب مرجم و سق: ر الوار مان تا ی ستوی

anwarkhanqasmi@gmail. con ائیل:‎

حلعیات: ۸۸

le تیرار:‎

تبجت: اروپ

پاجمام: في ان نی

کن اشاعت: فروری ے۰۱ ۲م مارگ الاول ۳۸٥۱ھ‏

کپوزنگ: نوعب لق لكو ل سینٹر شر طیب »عقب ی اد

ریوب ل: 1115518 888

ناشر الاک رب ریت اڈ ای كب فر سف تا مره روڈ شب رطیبء عقب كيد كام دای بندہ ٹیلیون؛ 226 222 01336 نشرک کہ موس الق | آک٤‏ دید شلع مها رہب لی مو بائل: 11053 93589 اعد كته اا کوش کہ ق پور وروڈ :شر طيبء عقب عي كوم دی بند مو پا ل: 21171 74177

كتير صوت الق | نہ رب ,نوا الوم بت موياكل: 11053 93589 وایند الاک ینش تا یړ رم روهش ریب عت عي رکه ولو يندمو : 5518 ۱۱۱ 888

تہ وعدييث بل علا احا فکامقام

كان بعض السلف يقول: لا یزال الإسلام مُشید الأركان ما بقي له ثلاثة أشياء: الكعبة» والدولة العباسیة؛ والفتیا على مذهب أبي حنيفة.

بض سل کا تول کم اسلا مکی بنياديل ال وف ت کف میا ری ںگی ج بک كفك اسلام یش تن زب بال ری ںی :

کب »خلا عباسيرء اور مسب حفى کے مطا بی فقہ و وی الطبقات السنية في تراجم الحنفیتن ۱۳۹

فق و صد یٹ مل علا انا فکامقام

برست

ونر

0 0 0 0 0 0 0 0

0

0

Oo

یں منظر ۸ فق مک حت مار می ارتام ۵ا فر ی: فقہ رک وفقہ سور کار تا ے ۸ زر تی کا شیوخ _ ۹ مب یکی رت اگیزوسعت ومامعیت ۳۰ انا میلو پیٹ یبر ينايكاك شبادت rr‏ يز ہب حل اور علا ولویند 1 ول بث: حلفي تکاسب سے م رکز 2 ولو بشر کے ذریجہ نب ف ىكل شرو اشا عت اور حضررت ناو فو م فو ۳۹ هیر مم ۳۰ فت وحرييث س علا احنا فکامقام هید ۳۸ ۷ واچھار___۲۹ ابر ایام -فرو ی ال می قي کا سب سے پہلا مر _ ۵۰

قد و عد یٹ بل علا ءاحنا کا متا مم

O © O O

مر قيال داودین عل ۵۲ اتا فکواصحاب ال ر ا ےکی ےک وج ar‏ امام ابو ينار وا طن و شن - اقا کے لیے اين مز مکا تیم بن ماک بالل میٹ سے

اترلال ۹۰

فقهاءاسلام ہک واا ال اۓ اور الل الد یٹ کے دوکیپھوں میں ای 4 رك 00000 ارا اا ره

عد یی معا یت قيا لك سب سے انم ول ۳ فو ١‏ ان :۷۷:۱۰

ابر اتيم من جاور ابطا لی قياس لا بكرت اسان ے ملق ارام اد ,بر رازی حش عي مم ل اور

7 ا لكلام ۸ لفيا ا مان اور ا كالغوى بل مقر / ۹ ججررت تنس متعلق انتا فک عبت 7 اتان ےے دوممالاودا یی ۹

احاديث 1 تولیت ےرا 7

ټول ید مرسل يدعااءكااعان +11 اچ اس ص9-. ا شر __ ۸۲ 2 ریت لیے امام لهاو ایک نماض بل ےے ۸۴

فق و عد یف ل عیام احنا فکامقام

O

0 © 0 © © O

0

0

0 0 O O O

حریث سے اشر لال کے لیے احا ف کے جندد تق صرل

وضو اا Ar‏ عم وف شس كوف ہکامقام__ ےہ۸ صاب کے ور ميان عبر ان سحو وكا متا م ۸۸ کو ق میں حضرت لاور حطررت ابن سحو ڈ کے كيار ار« _ ۹۳ ارام یکا بلندمقام 0 مادئن الى لیا سرز ناف متمو یی متام ۰۵ رز نو کالما اور اولي اتیاز اام ابو یف نیقی مز اروا سلوب ___۱۱۱ امام الو طیفہ کا كت تارف 18 وت ہج لی کاشور ال ظام ۵ اوعقي - سر مقبوليت ۱۸ رہب خف کے پار ے می این ولگ داست e‏ امام الو عفر فراعت ۳۱ آم نوی يالب هبني قرا لكا بت لاسا ۱ ايام ابوعفیفنگ یکرت عدييث rr‏ عل زان میں میگ ير ممولد تتاو ۱۲۲

فق دیش شل علا و احا فباعقام

9 © ©0 هم‎ ©0 OO O

0

امام ابو فیس ا حاب rr‏ لوو ا ۳۸ جمس تعر یل كابس پر ایک ناق دہ نظر

اتناف کے خلاف می اور ابن عد ی کاب جاور تاد

قي _ ۵۸ بجر وتحعد یل کے مو ضور ير امام بار یک کتابوں ے استتفادہ کر وقت ایا و جم و تخر بل یس ابن حبا کی بے اعت رای ۱۳ ابن یراوید ال رمن بن ميدق و جر و تد بل يل خطيب بف ر اریکاوزن r‏ ای مک کاب ابر والتتد یل ___ ۷ سا یا صب I4‏ احا ف پر احترا کر نے والاجهالت پاجودکا اد ____ >" علا قائیت. قومیت اور نز ی تكابنيادير جرح وتحد یل _ ۱٦۹‏ می شی نکی متحصانہ جارخ کے باس ثبل اخ | وکا بی .. رو ۱ ا اما حعافظ ابن تج تحصب اور یقت او lr‏

فهرست مات 7 ۱

فق وعد یٹ بل علاء اتا فکامقام ۸

مر ست کاب لام کوٹ کی ”فقه أهل العراق وحدیٹھم“ م 5 اردو جم ے۔ ا لكثاب کے ظہو رکا پیل مر ہے سك ہن وتا کے بور 5

ومتروف "تق واشاكق اوارہ ماس بھی نے ے ۵٣۱ھ‏ میں أن دیش کک پر

قامت خصيت حافظ وذت» ادام زی ای تاب ”نصب الراية في

تخريج أحاديث الهداية»ى اشاعت کا موب بنا کول کر ب ےتپ

فروگی سا تل بیس تام نامب فقس ولاك لكا سب سے مسر اور مخ تن

يزيچ جلك أظي رفن حعدی ٹک نابول میس نيس ۔ بعد یں نے ۸ وا ريا تام تفاط و جد شی ن نے رک نابول ٹیل ا کراب سے تاره ست کیاہے تا بك فی مول ابیت کے پیٹ نطرء كلل على نے ہہ قرار واد کے مورک یکا تاب کے سات ایک تدا فی مق م بھی شائ کیا ہے جس میں لت ف سک انیازی تصالص» مرن کے جوابات» الام ابو "سل مر دز فضائل, اور آپ کے ہی “رع اور راج پر بط حاص روشق ڈالی جائے کے وام وخوال زیی یراب سے استتفاده سح قل ذب > ایل تی اقیازات سے ول واقف ہوہگیں۔ چناج كلس کے مق فصل وی 8 يذو ليشن پا سک يا اک اس أشي مکا موا موقاس جو ال کیا جات ےکیوں با کہ ال بجيو مكل اور تی عل كا مكو انام دس کے لیے عام الام شی امام ا

کوش سے ذياده موزل ی کو بھی نی ہے۔ چنا نہ جب اد کوش کی غ مت شی ہے درخ است بي لک یگ آپ نے اے قول فر الاء اور اس کے بعد آلب کے تلم سے هبي شق قرف اور تارف مل اییے جارس کے نت د ب ھکر علاء جج ران »سک اور مشق فرطرب وس رو رك يفيت یش شاداں ور قصال نظ رآنے گے۔ ظاہر ہے مہب ی کے ررئ رتيل اور ال یسک یر داری امام وی سے زیادہ بت اجام دک کون ks‏

آکینکیوں د دو نک تا ابل

ای اکہاں سے لائ ںکہ تج سا ہیں کے تار شاہدے که تی و سو سال میس انف رارک طور پر انا فکادفا ا موز سے ياد کے کی ںکیاہے۔ ویک شیر بے نيام نے ہب خی کے فلاف اه والی بر ال مانہ آوا مكو نما مو ش شکرن کا یڑا الما رکھا تھا۔ جرح وتیل اور طبقات وتر ای مک کل میس حتاف کے فلاف رثن نے ج زان ددرازیا لكا ہیں اور ان کے سات جو سو تلا بر جا وکیا ہے وم مم مد یٹ سے اشتغال رسكت واد رات بر شی خی هل لین اس نا فان سے

() کر گیر اتا گرم پھر العلوم, ریت مو لان قت ار ی دامت )رکا کے “لحرن ایک اد ہکیاکہ جرت ادس علا مس ای اک نظ ننی ںآ ما جس نے لی انا فکا اتا فا کیا ہو تالا مکو کن ےکیاہے۔ رت دالا سے اك ترا تال اوراس میر ان شش لام كوش یکی سے نظیر بات کل اكد اعتراف فرایا۔

فق وعریث يل ملام احا کا مقا م ۰

بده ااه کے لی ایک نهايت مقر کی مرخ اور نقاد اور طبقات و2 ائم کے برك ضر ورت تھی جص نے ہق شون او متاخ ری نکی تام بو كو چان حا ہو اور جس کے ساح تبات عالم کے منطو على نی بل وت لشف بول اور وہ تام ہین ے سالک وم ابب اور پارات واحوال ے کول داف و۔ تابر ہے لا کو شک سے زیادہ ال هيدان یمم نے را ورو کی موی ؟ الام شق کے دور کے ایک یم محر ثء علامہ هریز ار علام کوش کی تريف میں فرا یکر ے ےکر : وأما التاريخ وتراجم الرجال فكانت عندہ كلوح ينظر فيه لايغيب منه عن ذهنه منهما شيء 3 تكوش طبقات وت ابم اور وار ور جال کے اشن اہر نكو پان فو نك سار کنیں ہمہ وت آپ کے ساحن ككل ہوئی ہوں۔) لاح ری ميخ عبر العزيو مار کي اتاب ”السفينة راض اكا- بوجوو اس حقیقت ےک اا مکو شیک یکتابوں نے عالم عرب يل ایک القلاب ہم اک دیا ابر پر دیا عرب ایک یل عرصم ےآ پکا کمابوں سے متیر ہو رایسب 2 ۳4 وه 2 11 کاو لے استنفاده سے ا کک کروم ہیں۔ جنائيه تق ما اسال يبك احق نے اس خلا کپ رکرنے کے له اس پا کاعز مکی تاک اس یم كاي ادرک زان زو میں ضرور تن کرت ہے۔ الد للہ اب کک سا ت کنائیں قار ين 4 ون میں پٹ کی ہیں ادهل علم سے خرا نشین عاص ل كرتل ہیں :اود |

فقہ دحدیث مل علا احا فکامقام ۱ ال کے اه کتابوں ير کم کل ہو چچکاہے۔

جیب بات ہ کر احرف سب سے ييل ناجم وتان ل امام كوش يك ا یکما بک انتزا بک تھا؛ يكن درو اباب کیا :ناپ اکن بکاتجم بروشت اجام یه نہ ہو۔کا اور یل کی راہ میں عرو جوا کی دج سے كيلب محر توق ں آن یگئی۔ ا کا ب کا جمہ اعرنے ۰۰١‏ ٢ء‏ میس ش رو کیا وا يان ررس اماردو اود اگریزی کے تعر ور سا کل زلور طباعت ے آراستر ھکر قاد تين کے پاتھوں می بورع گے ہیں۔ تقر یبا باد سال بعد خد ا کے خا لد میت سے اعقز تاب تا رت نکی خدمت می ف یمرن ےکی سعادت ما لک دبای

ا کناب اود ایا کو یکی دی رکب کے تر جمہ میس زیادہآزادانہ تمارک س گم ک اگ یاہے۔ صرف اه مقامات پر آڑاد یکا مظاہ رک یاکیاے جہاں الا دی ود ل ا سے جمہ کے تمل مو کا انی و كي كيت كل ب ہکتاب نہایت عالمائہء مور مانہہفقپانہہ جد شانہء اور ناقداد سے ال ےچس دفعہ اس باتک بھی امکان ہ ےک کول یی راہ اف صرف ایک پر خوائ دی ی كرفت میں نہآے۔ اس لے ايك مقامات پر ددیاددسے زیادہہار ۱ پھ لیے می كول رح تس تاک بات ای رح ے وا شع ہو جا ؛ لیکن

ابت مقلات بہت ہیک ہیں۔

۱ ا )اوی نے متعددع كنبو کا نام تا سے كر فرما یا ؛ ليان ہم نے

ج یں تحمل نام دک کر دیامے کہ قا رك یکوک یکا بك نفانری كول

سدس ااام وشواری نہ ہو۔ شل ایام لوق نے ا سکاب یس ایک جل امام وق اک ایک شور ناب ”خلاصة الأحكام في مهمات السنن وقواعد لاسام" کرت وقت صرف ”الخلاصة“كلماب؛ من نے تج می ا لت بکاپودانام ج ری نکی ہو تک غر سے ذ رک دیاے۔ اب کک انام کوک اتاب کے متعرو علي اير يزان مويه دیں۔ سب سے یهلا ای أن ”نصب الرایۃ“ کے ساتھ بنروستان کے مور اداره گس على سے شالع مواد اس کے بعد ایام ,ول مرا كلم مر کیل ملام عبد الفتااح ابوه على ثور ایر مرقده نے علاء کے اص رار پر لے ل رہ يل رسال شی اہن شان ار تخقيقات دتعلیقات کے سات شال کید ا ن وک تن میں نار على اور تق عرق یری وا طور دا علق ے۔ ہے ایڈلیشن مصر سے الق ہوا۔ اس ای یش کا ایزی هکت الوق رن تب مات ظاہ ری اور متنوى طور پر ہ رط رح ے ا کو معياركا بنا يكو لك كال وزیا

نيز للف اسلاى مالك میں جہاں بھی نصب الر ایة “کوش کاک عام طور پر ال کے سا جح ہا مکو شک کے مقیر ہک وی ضروری طور يرشا لا ید اس کے بعد ۲۰۰۹ء ماق ١۱۲۳ھ‏ یل يع ابوفدة کے کر واک الم رصیق ات ما مکو رکا رسال دار لباک قا ووياره شالع مود اتر نے ملام الوروك تی یکر وو ن كو اس ترجمہ ثلا اص بنا اے او رآ پک شق حو ای سے خو ب استفادہکیاہے۔'ڈ کرس الما

تلیقات سے بھی شض مقدات پر استفادەکیا ےڈ اکسا مکی تين یں تب سك انحو لس بر ہک تعلیقات ےکن تناها لین بہت بول پر ان تخليقات میں مک ذكر تی ںکیاے ج ہک ایک وا میج" یئ

از از م کرٹ یره ی العلومء حشرت مول نت ار یبیل ال بقاند کے شگ گار ےک رت والا احفر کے ذر ی تر ج ہکروہ ان ی کاموں اور حوائی وتعليقات پر ناقدانہ شر ڈال رہے ہیں اود اپ رانا شورول اور افادات سے حر کیاکاوشوں کو مالا مال فرماد ہے ہیں مارک دعاے کہ الد دب ات سر ت کا سای ہم پر جادیر قا رسك جاک ما مکوش کي رت اكيز على فاد آپ کی زی گرا مم شکل میس عوام ونس کے اتھوں یس بورع جاۓ اور م سب آپ کے کی افادات سے یاد ہے ید یں ۲

اک طرر سے اع عزیزم مجر سعدان «لوبندى كا كار ے جغوں نے پاد ری ڈگ کے ذریعہ اس را ہک وگو زنک کی اثلاطات پا ککرنے میں توا القرو ركو ششک او موصو یکی اور مکی تر قيلت ٹواڑے-

فش امیر کہ ا مکو یکی يكاب إل علم رات يرميج ابت مكل اور علاء اور طلہے سب کے لیے نان ثابت ہوگی۔ ال کے بعد لام کوٹ کے شال سك جانے وانے مت رم رساكل ند رجہ ذل :

فق وحدیث ٹل ۶لاء احا فکامقام بت سس و لت مت ا کے جم یہ دک ۳

۳

طاني لاٹ

اكش ىب کل مکی نل میں

حيات لام ال اوس ف

جات لام مھ بن اشن شب

حيات لام زر

بصن نين شه

جات لام هاوق

حلت لالم

ام ای کے گے اكتراضات کے جدابات اشن تان

. اقطیب)

مقالا کول من قب الوحفيفم وصا يان

ر نوارخانءدلومند ۳۰ میم ۳۰۹

فقا و عد یٹ ل علاء احنافكا مقام ۵

م وا 1 قر نار می ار تام

خد اسے ذو ا لال نے اید اشر ميدن وم عليه السلام سے نےکر ناتم انه جناب ر سول ار و 2 تك ب رگ يده اذاثول کی ایک مقرل بتماع تکو مبتوث فرمایاجھ آ ا ر شد وب ابیت کے تابنو وور خشير ہککشاں جے۔ بر وود ٹس اللہ رب العنزرت نے مر ا یکی قوم کے شايان شان اور بشرى تقاضول کے مان ايك کال اور جاح د سور حیات ازل فربايا کہ ا سكل روشق بش یت تد اکی مرف ما لكر کے اور انیا کے لا ہو دی یکو ترز جا ہنا کے کم و ميل تنام انیا کے اريت انا وج ار ین ر ہے ہیں جحو نے ان بركزيده ستو کل ر ےطان اچ وک اور ووی امو ركو زعا کو سعارت ما اور ان کے ایک ایک َم اور اشارے پر اپ زندكيال ربا نکرنے کے یے ہمہ ونت تاد رج ليان ام ایام کے دود عل انسانو لك فيك بی :اعت ان کی ع لف تک رک ری ا نکی دعوت كو دا ورے سح قدحت قصان بال ری اور ال طررح ست شقادت وب ن ا نک مقر بی نکر رمک نی ال :يلل امیا ہک ايك بذى تعر ادكويق ا رائیل کے اتھو ںف یت ککیاگیا۔ الا

ابيا وكرام سك ا دا فان دار چاودا یی چا بکور کر تے ی شمر و 52

فقا و عديث بل عاو احا فکامقام - فر اورسیای ہی تیں پا اک ايكنذا ه کر ارج کے سامش هاب مايل - ب نے ان انی کی مقر کتابوں میس تحر كاي نايا کپ مق کو روويد لكر کے کے تی مق يناد ياه ج بک ان يأر فد رداول نے انبياء سك دين یش خرافات داوہامء اور سب روپ و كوو اخ لكر کے ورن کے سسا کے بد تب تس کیا و ا و نالل سیا نزرہوٹ ےکی وچ سے اکڑل وگوں کے لیے سادا لغ نکب کان الثدرب لعزت نے انائیت کے لے اپنے سب سے آغرى می مھ ل کا اتاب فرمایا اود آ او ای ىكتاب عطاك شل كو بيش تام تح رجات اور ردوبدل سے حفوظ رسي ےکی دا ات دس د ىك ے اور كول بھی مخ كى بھی وور میں تہ مق فيل باسنا چنا ترآ جس رتم سول اب زنك بیس پر طور پر كفوط تہ بالكل ای طرحع سے ىہ قرش وک رخ بھی ام لیے کے سان كفوط سے جس می کی بھی رو وہر لک یکو خاش نيس ہے۔ رد ق رآئن تام سايق ابوک هم اور تمه اور جا روز امت پیر امود داسك تام انمانوں کے لے آخرى مصررر شد وہر ایت »ال لے الل تعاس4 ات ال رخ اور 2 لش ری وى سل طور پر چاه اور مب ی کاب مسلمانو ںکا سپ سے با ی اور تن ری مصدر > رسول الہ اود آب کے اصاتٌ سك اقوال وافعالء ار شادات دبد ایا تكوياكلام ارت ىك شر و ظز یں۔

وور بی میں خر سول دوخ تام یی سیا کی عھی اور ری مساكل

فت ہ مد یٹ ل نایا انا فکامقام ۳ کا تل اپنے اماك کے سام بقار ضر ورت یں گر حے۔ صا بم كام مکو جب بھ کون ستل ور ل ہو تو یہ خض رات بار کاو ر سال تک جاب رجو فراسة اود اپنے سو الات کے جو اپات حاص کر لي کان آي وتم کی وفات کے بعد اعلام دور درا منک میں کی کی اور امت کے ساح سے سك مسائل بيد اہونے لك عام الام ش لسن وا ل مسیون نے ای اور اتنام کے لیے فطرى طور پر متیر علاء وفقہا مکی جاب رجور عكر فك ضرورت كو ی۔ 27 یں ایک آحر اد ای تی جو کل وفاوی یں شرت رکھتی تھی تخل فقهاوصماب. کے نام سے يادكياجاتاس-مافظ ابن دم قاری نے "النبذ في اصول الفقه “شن اور اام این لقن ”إعلام الموقعین“ يل ان مچ دين می بدك تفیل بیس ج نکی فد مت يبل حا رم وکر موی ہکرام اور ان عنام دی مساك ييا عل طل بکیاکرتے تے۔ یقن ما ل ایک جماعت اجتهاد دو یک ذم دارى انجام ديق ؛ لين عام طو ري ا کا كام انف راق مواكر تاتا ا کو كنتب كار اور مب سر یں تھا سوال ہے اتا سکم منم طور پر فقد واجتتهادكا سل کہاں سے شرو ہو تا ہے۔ اس سوا لکاجواب دس کے لیے مور خی نت 1 سب ۱ سے يبد سوالي مج یکو م اور اجا گی اند ازے فقد وفأوى کے مو ضور ركام ۱ شرف عاصل سے ددہیں معام ای تاز اسان مجر مثلم , حول الشكلات»خادمر سولء نع الف والفتي وم ار سول» سمالي یل سیر اعبر الّد

فقہ و صد یٹ ٹل علا احا فکامقام ۸ بن مسعوو ر شی اللہ عشہ۔ امام این جيب" فرماتے ہیں: لم یکن أحد له أصحاب معروفون حرروا فتياه ومذاهبه في الفقه غير ابن مسعود. (این مسحو کے علو (صواب میں )كول ايها نی لگذراے جس کے معروف مج بزہ ہو ے ہوں, اور جل کے فته ما یکو متضيط اور مرح بکیاگیاہو۔)لاظہ رایں: إعلام الموقعینج ۳۷-۳۲

زر لى: فقہ ری وف سحو و یکا ار تفا ہے

مو رخ ابل جرک کور عبار تک ناد تم بای ال با تکا وعو یکر کے ہی ںکہ سب سے پہلا اور سب سے متیر تی رر منظم طور پر عام اعلام میں نظ ور زیر ہوے دالا كبر ایر بن مو ڑکا قا م كرده یر سے سے چو یدنا بن النطا کی زیرگ انی رز کو میں وجو دی ای ور ا سل فقي فى ای متو ارت ری و سحو ری فق ہکا ار نقاء وو سب امام الو طيقل دور كلاج فقہ آپ کے كبقرى حلاطھ کی برولت اپے عرو کیچوک اور جار میں بی لک اور اسلای افو نکی شکل افیا رک ری۔ اس کے بح كوف میں ف واجتا رکا جو سلملہ چا ری »وال 1 نظي رجار الام س يبن لق سر رن لذ کے فقہاء نے ارت ای اور ته اجتتهادات ء ارت اد ارامات اور تن یل و ءاور نو قق ل زرف فقث اسلا ا کی جو خرس کی سے ها ار اسب سے بذاقانولى تر ہے جج سک ہہ تفصیل تپ ام کو ری کی ا سکاب میں آ گے بھی اع کے _

فق و عدیٹ میں علاو احا کا مقا م ۹ فق فكاشيورع

خلا تم عباسیہ مل ادام ابوالوس فكو جب تا شی الققناۃ کے هه سرفرا زکیا كياء اک وقت سے فق تف آسما نکی بلندبو ںکو پہو کدی بمب ی اسلا مكا سرکاری جسب بل نگیا۔ اور پور سے عام الام یل تضاء کے عبد سے اک کو سرفرا زکیاجاماتھاج يذ ہب ح یکاماہر اور ھی ول

اف عباسیہ کے بعد خلافت اي بس طويل روک نربسب نی یی رارک نم ہپ بہاے۔ اس کے علاوہ مغلير سلا ین ماده کے سار سبي فى ے مقلد تھ اور ساطت کے تام ام وف اشن ہب فى توك ون صادر فا جات ك- فأوى ندب ست آ لون ناواتف ے؟ ال رت اكيز نی ر کو بو رک مقایم سلطد کا و دستاويذ اور ئن کت ناما قفا

لانت عیاسیر» خلافت عثاثء اور لط مغلير اسلائی جار و سل تمن ربع سے یاه غر ص کو يط ؤي » اود اس بات سے ہ كول داقف كي تو ہی اھ ب هرید دب لال نہب کے شید اسب سے ا سيب طابرب ال کے پنیا نكا الال اوران اک یت اود ا ن کا نی یر تون شیع تک غير متمولى احاطہ ہے ؛ ليان سات سا ہے بھی ايك نا تالا انار میت کہ اس مر ہب کے اصول اقا ٹس د٤طافت‏ اور کک سے جد کک بھی دود ل فقہ اسلا كوو پیش جن کا رپ جاب د سیخ کے ےکا

فت وحدیث ل علا احنا فک متا م ۲٢‏ سے اوراس تی ير ونيا كى بھی وت الن اصولو کی رو ن ٹیش م سے سال وحواوث وو قح وو از لكاكافى وشالى عل مر کیا جا سس ۔ ام ابن حزم ظاہ رکا به وک ال بنياد ہے کہ اکر زب خف کے يه كلو مكار فرانہ موق توي مر ہب نہ یلم یقت هکم علو یں ال رہ بک افیا ركذ پر ایک طرح سے مور تك بھی وم کو پلا نے کے لے ای تاو ڈھا مہ چاہے جو تام انال شجول اورد ی وداک كوشو كاكاعل احا ہک ابو اود ظاہرے ب خول مہب نی سے یاک اور میب ہیل نیس پک مای۔

سب 1 171 جردت ایز و سحت دجامعیت

جو نت ى امور قاس اور سائل اجتهادي کا بور مطال كرس گا اور ۸ ملف بر اہب وم ان كك صول وروی جامزه كاوه اس حقيق تكو ول کے بغي یں ره سکف ہپ تی کے اندر وا تی ایک جرت ای يامعيت وہ 3 بت سے جس نے اس نہ بک متبولی تک اي یدیآ کک ار انات مل إن ليم رور منت لول يبب اور مل کول 00 کرد بھی وچ کہ دنر نراہب کے مقلرین بھی نیا وطاق يديا روا ات کے ہے شر ساكل میں فقہ خ کی قلي رکو دسي یں۔

زب خ کا ای چرت اگیز وسعت وپامه ت کا زک کے ہو ے تہ الادياء» ويب الفقهاءء علا عل نا ”رجال من التاریخ'

نت د یٹ ل علا احا فکامقام ٢۲‏

۲۵۳-۲۵۳ یں راے ہیں: والمذهب الحنفي الیرم أوسع المذاهب انتشاراء واوسعھا فروعا واقوالاء وهو أنفع المذاهب في استنباط القوانين الجديدة» والأجتهادات القضائية» يليه في كثر الفروع المذهب المالکي» وقد عرفت ذلك في السنين التي اشتغلت فيها بوضع مشروع قانون الأحو ال الشخصيةء وسبب ذلك أن المذهب الحنفي صار مذهب دولة مدة العباسيين والعثمانيين» وهي ثلاثة ارباع التاریخ الاسلامي؛ والمالكي مذهب المغرب طول هذه المدة. فکثرت فیهما الفروع والمناقشات» اما المذهب الشافعي فلم يكن مذهبا رسميا الا حقبة قصيرة ایام الأيوبيين» بینما اقتصر المذهب الحنبلي على نجد والحجاز اليوم. (ذبب تی بج لود دیاش ام مرا ہپ شل سب ت زياده مت اول اور شا مر مب ہے اور اک طرر] سے فقبی جات واقوال کے اباد سے ہے مم ہب سب سے (یاددمالامال سج ت سك توان وضواپا ے انپا اور ضام ہے ”حا اجتتهادات یل اس سے زیاد ناف ہ بکوگی بھی یں ہے۔ بسب کاس دكثرت فو وتات عل دو سراف ہب اگ ہے۔ كك ا لكا اند اذه ال سالول یس ہو اجب ٹیل پر سل( مکی منصوب سازی دام مراد | کوج سے لعي کی اور ال خلافول کے دوران مر مب تی رکاری ب ہب تھاہ اور ہے دولوں بی خلا فتّس جار وع اعلام کے تین رب کو محیطا یں ج بکہ البرک مت یس الگی مہب ان دا سکاس رر ادا مھ ہپ را ہے؛ ایا 2 ان دولوں بی مر اہب يل فروی سائل اور شی ناقشات کارت سے پائے جات یں۔ اس کے ب رکس مسب شاف اولي ساطترت کے دوران ھی رمات کے لیے ر کار مہ بک حيثيت رکتا تھا ج بل طيل

فق وعرييث ڈل علاء اتا فکامقام rr‏ مک کا ا ل ا یج سی سیپس ي

مھ ہب ال ونت كبر اور تباذ ٹل عل روہ وکر ر ہلیاے۔)

وال شبات انها لوبط يابر ينانا صقر قب اور مغر مصنفي نكا تیم تین على اور اولي کار نامب اور اسے اکر یڑک ز با نکاسب سے انم موسو عباتا اتاپ ۔ الى انا یزیا مقالہ ار نے نر کی م آچگی ء یک اور و سحت ۷ اقترا ف من ر ج ذ بل الفاظ م شکیاے : The school of Abü Hantfah acquired such prestige‏ that its doctrines were applied by a majority of‏ Muslim dynasties.‏ His legal acumen and juristic strictness were such‏ that Abü Hanîfah reached the highest level of legal‏ thought achieved up to his time. Compared with his‏ contemporaries, the Kufan Ibn Abî Layla (d. 765),‏ the Syrian Awzã 1 (d. 774), and the Medinese Malik‏ (d. 795), his doctrines are more carefully formulated‏ and consistent and his technical legal thought more‏ highly developed and refined.‏

(يتق ابر طقس نرب بکواتا اش و رسوا سل تی اک اک رار ی خلا قتي اهه اراس ای جب كك پیروکار تحمل د الوحفيف کی وانولى رور فته بصیرت ات ال زان تک حاص لک یگئی تاو یسک سب سے اع معیلک بوبلا بول یں اپے ماص رين ابن إلى فی توف ۵ے وہ اوزا شای مل

روصت ثبل عا احا قکامقام rr‏

زیادہ تتاط نان سک اور اس میں استقل ستقلال اور 7 آل زیاددے اور 5 2 على اور نوی اكد ایروں کے مقابل عل زیادہ معيارى انراز مرجب اور ٢ے‏ گے یں۔)لاحظہ فرك و اص #4

مر ہپ ص اور لاء د لوبثر

فق تک تاد تي ايك سرسرک أظ فك سے اندازہہو ما کے سب سے ياهال مرج بکوفر و د شش وراک اہے۔ ظاہرہے ال ہب گی سس او تر تیب وت وی کرت ای کار نام اک مر زتنس ایک عي اور تارسك شه رکوفہ کے حك ل آیا۔ اس کے بعد خلافتِ عياسير بل صدوں کک اس يذ ہب کے پپیردوکارول اور فقتهاء مان نے ال ظط ہ بك حاير اور زیت کے لے خر تیف بای دور کے بعد اف کات ےک زی دود شرا ہوا ہے جس شل فق فی يد زاون نکن تصنی نی کی اوراس نرہ بکواصو اود فردگی ور رايت الل او کیاکی

آخ کی دور یش صرز ین ہن رکو این ےگوناگوں تھتوں سے وارا اور اس كك ٹس الح عيا قره اور رت ای رجا كار بيد اك غوں نے زبر وتصوف س لی وجثير بخرال» اور گر وفلف أن رازی وغزال» عدیث ور ال يل

زی وان چم زر واصول شل مر ینان وس رشیء تفر شس ز ترق اور اه اور مارد مش حادث ماک اور امن رب کی يادي تاز کروی اور ايشياء کو یک ان عبر ساز خصيتون کے علوم وفونء اپا کارنامولء اور ہو ۳ گی صداوں ے کون 6 ای دور میں علاء دبائين کی ایک جماعت نے رد اعلام لام این حضرت :نولوق مولي سوسا ىكل 52 قارات اء ک تیم 52 ونوری رارالعلوم

فق وري ں علاو احنا فکامقام ٢‏

ا سس سس دل ہن رک بفیاد ڈالی۔ ال ادارے سے شلك اور يهال کے فاد تصيل ما

وتا رثن ومفسرین, فلاس میرن » عراد وذربادء خطراء و وا »اک بار و جابدبإن نے بر صغیر میں ريل على اور ری انقلاب کد ای کاروان گم وا اور رکز كر وی سے تحلق رسكت والی میت نے جہاں دين کے تام شہوں میں ہیر ی کارنامم انجام دیه ويل ال رات نے ربب حفى کی یم غرمت کی اود ال ہب پر ہونے وال اقثزاضات کے جابات دح اور فر ی ی جار وتقويت عل ان ضرات نے علي اور ارده زبان بس مرول ایی تصایف ر كس جر اس وت على اور گلری جار وك ايك لازدال حص بین يكل ہیں اود ۸ صغیر میں اسلاى علوم وون کے بقاء کی ضا بن يكل ہیں۔ لام کین مر اسم نان وتو سيد العا كفدء فقي و یچ مولا رغير اح روت م رر یکر مولن فر نک ارام حریت, بط کیل نم بر مولا مود صن ول ند مث ناقدہ علامہ بير ان بیو ی» رٹ عدم ان يام ار اور شیر »گم ال تمد »رد مد اسلا می مولا شرف على تینوی ٦۶ن‏ احص شم اسلام »شاد 3 سام مول نا شي ر اجر عن الم نم لاسام ماد آزادی مولانا ین اع مرف مت | کم يخ لیریٹ: تق اہر 2 ُكفاييت الد لو مد ثكيبر» مولا نار العزيز پا ی, حر بر مر صن شاجال پور ری یم رورا فر چ نال ٴا ح مكلوق مولانا جر اور ل كانه صلوق), مفسر دوراںء ڪلام صفق گم شفع مغ شی ميث مولن جد کیان لوق دا ی اسلام» لام لی ال م تی مر بوس ف کان ر علوئء حدث دقت٠‏ علامہ بد عالم می رشی, یرٹ رد ,مخ تفر اجر عمال حرث ١‏ علامہ ‏ لوست مورک

أله مد یٹ بیس ملام اضرا كا مقا م 8 محر ٹ مل ا عیب الر من | كل حوري ناقدہ ٹن ماہرء ملاس جر عبر اارشید تال یره رات نے ب مسب “ىك فر مت اور تام بل اريت با ال انام دون سکی نظي جار أل مکل سے لتق ۔ان اكلا تصانیف او كنابول بیل تقر یبا تام مباحدث لبك ابت على کات دلا كف سل ہیں سکا زکر وريم مصنغین وشار یں کی کک نابول میس دل لتا چنانچہ فق شف کی تم میس ان بت اي دل بتر ى لامك جو عرف اور ار وعات روا اور تعلیقارت دبال ہیں ان ل جا ءا ای تاویلات وتفبیراتء تشریکات وشات جع و ثيل » اور تن وت يب اجه کی نھونے بیان سك کے ثيل جد تق می نکی کنابوں كك میں دستیاب نہیں یں ء اور یہ ان اکا بر و عفرا مکی عمبقریت و کرک یکا بن ولت ہیں -

دلوبئر: حط ككاسب ے ”7 7

ای كول رک نی سک تر کل دو صدكات اشد رب الع زتنے ال ہن کو ایک نال عنایات وت جبات سے بر من کياس اور اس ودس عر سے ٹس ال دای دس لو رک د ناشن اپنے لانزوال على اور اصلا ی قوش موش ہیں ءویں ہے بھی ایک عفییقت ‏ کہ اسف ال سر نکو نب یکاسب سے بڑام كز بنادیاہے۔ دل بند کے جال عبت سار ست اقیازات ہی وہیں ال کت ب كلركا ايك اہم ادف گن ال زہب | لبو لت راوید ینتک امم زین شرب ملک اسلام ولا س على نروک ور ارم قرو دل بترت 1 تر یف کرت ہوے اپ کتاب ”المسلمون في الھند“ ص٢٢‏ ۱۱۷- س با طور ير فررابة ہیں: وشعارٌ دار العلوم ديوبند: التمسكٌ بالذین» والتصلب في المذهب الحنفي» والمحافظة على

فق وحدیث شل علاء احنل فکامقام 4 القديم» والدّفاعٌ عن السُنّة. (ين رار الحلوم ربوبن كا شعار دی نكو مضو ی ے تاهناء ز ہپ ۳ تن سے کاربندرہناہ اور قد مم روایات کو نرو 9 اور دف گن ال ے۔) مقر اعلام مولاتا الوا سن تروق ےے لپن مورخاتہ اور ران اسلوب میں جثر لفظون 2 ولوین کی ج نہات مان یف کی ے ده ایک نا ال زار قیقت ے اور آصلب لاب | 1 و تق سکع کک ركانهات اہم ضر ے۔غلاصہ کہ وا رالحلوم ولوین کے بایان نے روز اول نی سے اس نہ ہب کی غر مر تك اور سین رین المخطابٌ» رن ابن الى طالب اور خا کرسید نار رن مسعوؤاك اس متوارث فق کیہ رر ےقاظت او رآبیار یکاے۔

راو بت زر لیم مہب ص کی اشاعت اور حر ت ناف وت یکاخ اب روز اول تی تیه ریت منامات اور بقار ٹس جارس علاء نے کر کے كيلا جل ے اندازہ موتا کہ الد رب العزت نے اب ناص تس تک نار حضرت :نو کے ذر ہی ا رده اس كليم ورس یکو فی کا سب سے نظي تلد بای اس سل یس ایک خو اب جمارے علا بكرت اپ کتابوں می بیان فرماتے ہیں۔ ارواب اش ۲۳۱ كاددايت ےک : مال صاحب نے راک مولان فو نے خو اب می دعاق اک می خا هکم رک ھت پا اوی شیء پر يا امول او دکوف دک رف می رامنہ ہے اور ادھر سے ایک خر آل ے جو مر ے پادںاے گرا ہے۔ ان خواب کو اٹھوں ے مولوی ر تقوب صاح بب ادر شاه جا حال صاح بے ال کوان ے يبان رايا سر جرت ایک ص نے ال مكاخواب دیا انحو نے ہے یروک

فقہدوحدیث ل لاء احا کا مقام r‏

ا ےت کت و حمق بوي اور ا سكل خوب شرت موك ؛ ليان شرت کے يعد اا جلرى اثقال ہو چاے گا اور ل نے می و اب اور ای تی رخو ر مل ئانا وتوت كسب ماناک قاعره تاکہ جب عام ا وگوں می ا خو ا بكوييان فرماتے :تفر ماتے ایک ی نے ایا راب دیما ان خاص اكول سے فررادیے تھے کہ بي خواب مرا ہے۔ جب مولانانے مج سے بي راب بیان فرمایاہ ال وفت عل اکیلا تھا اور يال دہارہاتھاادد مو لان ے بے تلف مھ ے ابنانام تھی“

ارچ خو اب ش اعت یس جحت نہیں ہے ؛ ليان انا لیے خا بک کر كنا تقذ من دتا یی کے یہاں تن مات یا ہے ؛ اور اگ کو گی خو ا کی م عا ماما مك مد اور اس خوا بکی تی بھ یکی یم ت کی ہاب سے یا نکی جائےہ تو کر خاب کان با مق اور اہم ہوجاتا ہے یحی نکی مشہور عديث کہ رسول اشر لذ فرایا: (الرویًا الصنالحة جُرْءٌ من سنه وَأرْبَعِينَ جُرْءًا من الق بن يل خواب نبو تي یا وال حص ہے۔ امام ابو ریف کا وو راب وار وطبقات کتابوں میں موجود ہے جس کا تجير اہن رین نے بان فرا تھی حافظ زمی "مناقب أبي حنیفة وصاحبیه" یبش فا یں: ”عن أبي يُوسُفء قال: رَأَى أَبُو حنيقة که يَنْبشُ قَبْرَ الب الله ذللكء قارمنی صبیفا له (3ا یم البَصَرَةٌ أن ينال این سِيرَينء فسَآله فَقَالَ؛ هذا رَجُلَّ يَجْمَعُ سنه النْبِيّ

فت دعديث شی ملاب احزلككامتقا م ۰۸ شن ابو وس بیان فرہات ہی یک ابو نیا خواب ریک دم

کی ق رود ہیںء اود سم اط رک ريال کر رہے ہیں اور ال جوڑر ہے ہیں۔ ال ثاب سے آپ باس نا نف ہو ء اور ا چٹ ایک دوست ے پ کہاکہ جب وه ره چاگیل و این سی ر بے ال خوا ب کی تجیر وریافت فر يلد چنا نہ حول نے جب ان سی رب سے سوا ل کیا و امن سی بے جراب دیا: ہے كح ول لف کی سن كو .کرک اور الک احياء کرے۴۔)

امام ذ بی اي کناب ُل على ابن اک روات سے لکرتے ہیں کہ الو يفل فرايا: ”ريت کائي نبشث قبز النْبِيّ صَلى اله عَليْه وَسَلْمَ فجَزِعْتُ وخفث آن يَكُونَ رة غن الإسلام ؛ فَجَهْرْتُ زجلا إلى الْبْصْرَةٍء فقصن عَلَى ابْنِ سبرین الرّؤيَاء فقالَ: ان صتفث رُويَا هذا ازج فإنه رٹ یم بي“

(بی نے خواب ديلا اک بی رسول اللہ ھی کی تر ركحووربابون, شلك وچ یں کہ مکی اور يتك الل بات كا اريشم مسف کہ هل مرسمه موس ےکی ہاب اد له چم نایک اهر« اور اسل سل این یرس سام ساراواتقعہ سنایا۔ ان هر ین تبيروية برع فراية گرا ل کاخواب هآ علوي ہو کاوارث ہو -) خلاص ہی کرت روص رک سے دیو بن دک كشب كل رکوعالی طور بر مسب گا

فق وعديث ٹل علاو احا کا متام ۲٢۹‏ کاسب سے بڑات مان اور مم فلح کی یت ما مل ہے ۔ آئپ رک دیاش تلاو دی ین کی هرق اور ی غدمات سے الى یبن سر اب ہورے ہیں اور یق دی شرو ٹیش پر یکر ے ہیں۔ تج الدارخانء دا ند ۸ گر ۲۰۱۷

فق وعد یٹ ں ملاب احا فک مقا م :7 E‏ ا ا ا کے 1 ی

مور از مد بل ملا مارح ره على نور الث مره فر اسلا یکی جار تون ںگوں پہلڑوں اور مل گو شوں پر بر تلے؛: ۳7 اس موضورع پر آ کک جامعیت کے ات كلجا سكا ہے اس می كول شک نی کہ ما چاو میں فقي اسلا ىكل جار ور حار الت رن سے عنوان کے تہ اور کی ماروا اہ کے موضورع پر او وف عاو فت اور الس رن اود ان کے نامب کے تارف کال ای کاوشیں لوگووں کے ساح یی یک گئی ہیں ؟ ليان ان تنام میم رکو ششوں کے پاوجو و کی ال مو ضورع كا جن آ كل ل اداموسكا سے اودش كل آم اال سے ریب بورج کے ہیں۔ اس روج دعر ی فت ہکی جار كاك لل احا آسالٰی ے مک ن بھی شيل ہے كيو كاي فقہ عير کی سے سس ےکر ايك لا جر ود اس بک للف الک میس صرلون كل أظريال اور اسول اختلاغات کے ساتھ بی بو ے٢‏ اور نہ معلوم ہے ساسا ہک بتک جنار سج كا ا سکااحاطہ صرف : اس ونی ہو سکناے جب م رعلم